The Creation Of Adam | The Story Of Hazrat Adam Alaihi Salaam

Zain Shabir 0 Comments

The creation of Adam

The Creation Of Adam | The Story Of Hazrat Adam Alaihi Salaam

The creation of Adam

Birth Of Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ), Order to angels to prostrate Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ), Denial of Iblees the Devil:

The creation of Adam

Allah created Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ) from clay and before Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ) was created, Allah Almighty reported this to the angels that he is going to create a creature which will be called a human being and he will get the honor of our Caliphate in the earth. Yeast of man kneads from the soil which was able to accept the new changes. When this soil started to sound like strong potsherds,  so Allah Almighty poured soul in the body of Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ) and he became a live human of one to one flesh and blood, bone and haunch, and intention, Awareness, sense, intellect, intuitive feelings, conditions, and bearer seemed to be visible. Then Allah Almighty ordered the angels to prostrate Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ). Immediately all angels prostrated to Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ) but Iblees the devil refused to prostrate with pride. The devil’s claim was that he is better than Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ), that’s why you made me of fire and the fire wants to elevation and human created from soil, so what’s the comparison between soil and fire. O Allah! It’s your order that fire, prostrate to the soil. Is it based on justice? I am better than Adam in every situation, so he should prostrate to me, not I have to prostrate him, But devil forgot in his arrogance that when you and Hazrat Adam, you both are Allah’s creature, so no one can know the reality of creature, better than Allah, and also that creature can’t know. He was unable to understand this in his self-esteem and humility that height of that time is not based on this matter, which has been prepared for any creature but rather it is on the attributes that Creator of Universe has made within it. Nevertheless, the answer of devil was based on the ignorance of pride and arrogance. So Allah made it clear on the devil that the pride and selfishness created by ignorance have made you blind so much that’s why you denied your Creator’s rights and respect, that’s why you declared me a tyrant, and it did not understand that your ignorance has made you aware of the truth. So you are now entitled to eternal death due to this rebellion and this is the natural reward of your actions.

Respite thirst of devil:

The creation of Adam

When Iblis saw that Creator of Universe, Violation of Allah’s command, arrogance, for blaming of cruelty on Allah, has deprived him from Allah’s mercy and from heaven, so instead of forgiveness and regret, he requested to Allah that give me respite till the Day of Judgment and stretch my life rope for that long time. It was also the decision of Allah, so its application has been approved. After hearing this, he once again demonstrated his disobedient, he said: when you have expelled me, so due to Adam, I have disappointed, I will come on the way of Son of Adam and behind them, front of them, around them, and from all sides, I will mislead them and I will make their majority as your disrespect and ungrateful. Your sincere people will not get hurt by the abduction of my arrow and will be safe in every way. Allah said: we don’t care about it, It is the law of our nature So whatever you do, you will get same like that and the man who will turn after you by turning away from me. He will be punished of hell with you, Go away from here with your humiliation and shameful luck, awaiting to the eternal curse of yourself and your followers.

Staying in heaven of Hazrat Adam ( Alaihi Salaam ) and marriage of Hawwa (Eve, Alaihi Salaam ):

The creation of Adam

Hazrat Adam (Alaihi Salaam) was living alone for a while but in his life and comfort, he felt horror and vacuum so Allah created Hazrat Hawwa. Hazrat Adam (Alaihi Salaam) was very pleased by getting his companion and felt satisfied heart. Allah Almighty allowed Adam and Eve to stay in heaven and take advantage of its everything but Allah told them by pointing out on a tree that do not eat of it, even do not go to it.

Hazrat Adam Alaihi Salaam Came Out From Heaven:

The creation of Adam

Now devil got an opportunity and the Devil put this doubt in the heart of Hazrat Adam Alaihi Salaam and Hazrat Hawwa that this tree is “trees immortalized”, the fruit of this tree is a continuous relaxation in the paradise and warranty of Allah’s nearness and by taking oath he made them clear that I am your best friend, I am not your enemy. Hearing this, the first mistake expressed in Adam’s being human being. And he forgets that this order of Allah, was the decree, It was not patronizing advice. Because of the devil’s convince it was difficult for the permanent establishment of paradise, It was a false step for the permanent establishment of paradise and Hazrat Adam Alaihi Salaam and Hazrat Hawwa eat the fruit of that tree. When they eat that fruit, the human accessories started to grow. When they saw themselves, they were naked and they were deprived of dress. Soon they both were beginning to cover themselves from leaves, this was the beginning of human civilization. It was happening here that Allah’s anger was revealed and interrogation starts from Hazrat Adam Alaihi Salaam that how that disobedience despite the prohibition? After all, Adam was Adam and they didn’t try to hide their mistake in interpretations curtains, Confess with regret and shame that mistake has definitely happened but its reason is not rebellion. However, it’s a mistake that’s why doing repent I hope for pardon. Allah Almighty accepted their excuse and forgive them but it was time that Hazrat Adam Alaihi Salaam pays “Right Caliphate” to Allah’s land. That is why the decision has been given to him as well that you and your children will have to stay on earth for a certain time And your enemy devil will also be present there with all his belongings and you have to live in such a way between good-powered and demonic forces. However, if you and your children, sincere person and true worshipers were proved. So your real homeland “heaven” will be given to you for forever. Therefore you and Hawwa, both of you go from here and stay on my land and bestowed worship the truth till your appointed life and thus, the father of the human beings and the caliph of Allah Almighty, Hazrat Adam Alaihi Salaam took steps on Allah’s land with his merciful life, Hazrat Hawwa. Hazrat Adam Alaihi Salaam was taken down on the land of Hindustan and Hazrat Hawwa was taken down on the land of Jeddah. and they met each other in the field of Arafat (Hijaz). Therefore, the name of the field of Hajj is Arafat. Because both of them recognize each other at that place.

Some Important Lessons In The Story Of Hazrat Adam Alaihi Salaam:

The creation of Adam

So, there is a lot of advice and topics in the story of Hazrat Adam Alaihi Salaam and their cover is not possible at this site. However, it is appropriate to point out some important lessons.
  1. The mysteries of Allah’s wisdom is a lot and countless and It is impossible that any person can know all the mysteries, no matter if they are from near to Allah’s palace? That’s why even though the angels are very close to Allah but they could not know the wisdom of Adam’s Caliphate and until the whole truth of the matter did not come in front, they were unknown from this amaze.
  2. If the attention of Allah Almighty is towards a small item So he can be victorious on the things which are high in dignity, no matter if he is big and biggest and the vestments can be bestowed with honor and glory.
  3. Although, all kinds of honor bestowed to human beings and every kind of greatness and dignity was bestowed. However, its physical weakness remained in its place and there was still that deficiency of humanity.
  4. Despite being the sinner, if human’s heart inclined towards forgiveness then the door of Allah’s mercy is not closed for that human.
  5. In the court of Allah, blasphemy or rebellion destroys great and good deeds and eternal becomes the reason for humiliation. The story of Iblis is a dreadful story and his worshiping of thousands of years was defeated in the court of Allah due to rebellion and blasphemy, It is definitely a capitals center of the lesson.

حضرت آدم علیہ السلام کی پیدائش، فرشتوں کو سجدے کا حکم، شیطان کا انکار:

The creation of Adam

اللہ تعالٰى نے حضرت آدم علیہ السلام کو مٹی سے پیدا کیا اور ان کا خمیر تیار ہونے سے قبل ہی اللہ نے فرشتوں کو یہ اطلاع دی کہ عنقریب وہ مٹی سے ایک مخلوق پیدا کرنے والا ہے جو بشر کہلائے گی اور زمین میں ہماری خلافت کا شرف حاصل کرے گی۔ آدمی کا خمیر مٹی سے گوندھا گیا اور ایسی مٹی سے گوندھا گیا جو نت نئی تبدیلی قبول کر لینے والی تھی۔ جب یہ مٹی پختہ ٹھیکری کی طرح مطلب مظبوط برتن کی طرح آواز دینے اور کھنکھنانے لگی تو اللہ تعالٰى نے اس جسدِ خاکی میں روح پھونکی اور وہ یک بیک گوشت پوست، ہڈی، پٹھے کا زندہ انسان بن گیا اور ارادہ ، شعور، حس، عقل اور وجدانی جزبات و کیفیات کا حامل نظر آنے لگا۔ تب فرشتوں کو حکم ہوا کہ تم اس کے سامنے سر بسجود ہو جاؤ۔ فوراً تمام فرشتوں نے تعمیل ارشاد کی (تمام فرشوں نے اللہ کے حکم کی تعمیل کی اور حضرت آدم علیہ السلام کو سجدہ کیا) مگر ابلیس (شیطان) نے غروروتمکنت کے ساتھ صاف انکار کر دیا۔ شیطان کا مقصد یہ تھا کی میں حضرت آدم علیہ السلام سے افضل ہوں، اس لیے کہ تو نے مجھ کو آگ سے بنایا ہے اور آگ بلندی و رفعت چاہتی ہے اور آدمی مخلوق خاکی، بھلا خاک کو آگ سے کیا نسبت۔ اے اللہ! پھر یہ تیرا حکم کی ناری، خاکی کو سجدہ کرے، کیا انصاف پر مبنی ہے؟ میں ہر حالت میں آدم سے بہتر ہوں لہذا وہ مجھے سجدہ کرے نہ کہ میں اس کے سامنے سر بسجود ہوں مگر بد بخت شیطان اپنے غرور و تکبر میں یہ بھول گیا کہ جب تم اور حضرت آدم علیہ السلام دونوں اللہ کی مخلوق ہو تو مخلوق کی حقیقت خالق سے بہتر خود وہ مخلوق بھی نہیں جان سکتی، وہ اپنی تمکنت اور گھمنڈ میں یہ سمجھنے سے قاصر رہا کہ مرتبہ کی بلندی و پستی اس مادہ کی بنا پر نہیں ہے جس سے کسی مخلوق کا خمیر تیار کیا گیا ہے بلکہ اس کی ان صفات پر ہے جو خالق کائنات نے اس کے اندر ودیعت کی ہیں۔ بہرحال شیطان کا جواب چونکہ غرور و تکبر کی جہالت پر مبنی تھا اس لیے اللہ تعالٰى نے اس پر واضح کر دیا کہ جہالت سے پیدا شدہ کبر و نخوت نے تجھ کو اس قدر اندھا کر دیا ہے کہ تو اپنے خالق کے حقوق اور احترام خالقیت سے بھی منکر ہو گیا، اس لیے مجھ کو ظالم قرار دیا اور یہ نہ سمجھا کہ تیری جہالت نے تجھے حقیقت کو سمجھنے سے درماندہ و عاجز بنا دیا ہے۔ پس تو اب اس سرکشی کی وجہ سے ابدی حلاکت کا مستحق ہے اور یہی تیرے عمل کی قدرتی پاداش ہے۔

شیطان کی طلب مہلت:

The creation of Adam

ابلیس نے جب دیکھا کہ خالقِ کائنات اللہ کے حکم کی خلاف ورزی، تکبر و رعونت اور اللہ تعالٰى پر ظلم کے الزام نے ہمیشہ کے لیے مجھ کو ربّ العالمین کی آغوشِ رحمت سے مردود اور جنت سے محروم کر دیا تو توبہ اور ندامت کی جگہ اللہ تعالٰى سے یہ استدعا کی (درخواست کی) کہ قیامت تک مجھ کو مہلت عطا کر اور اس طویل مدت کے لیے میری زندگی کی رسی کو دراز کردے۔ حکمت الٰہی کا تقاضا بھی یہی تھا لہٰذا اس کی درخواست منظور کر لی گئی۔ یہ سن کر اب اس نے پھر ایک مرتبہ اپنی شیطانیت کا مظاہرہ کیا، کہنے لگا: جب تو نے مجھ کو راندہ درگاہ کر ہی دیا ہے تو جس آدم کی بدولت مجھے یہ رسوائی نصیب ہوئی میں بھی آدم کی اولاد کی راہ ماروں گا (ان کے راستے میں آؤں گا) اور ان کے پس و پیش اردگرد اور چہار جانب سے ہو کر ان کو گمراہ کروں گا اور ان کی اکثریت کو تیرا ناسپاس اور ناشکرا بنا کر چھوڑوں گا البتہ تیرے مخلص بندے میرے اغوا کے تیر سے گھائل نہ ہو سکیں گے اور ہر طرح سے محفوظ رہیں گے۔ اللہ تعالٰى نے فرمایا: ہم کو اس کی کیا پرواہ، ہماری فطرت کا قانونِ مکافاتِ عمل و پاداشِ عمل اٹل قانون ہے پس جو جیسا کرے گا ویسا بھرے گا اور جو بنی آدم مجھ سے روگردانی کر کے تیری پیروی کرے گا وہ تیرے ہی ساتھ عذاب الٰہی(جہنم) کا سزاوار ہوگا، جا اپنی ذلت و رسوائی اور شومئی قسمت کے ساتھ یہاں سے دور ہو،اپنی اور اپنے پیروکاروں کی ابدی لعنت (جہنم) کا منتظر ہو۔

حضرت آدم علیہ سلام کا قیامِ جنت اور حوا کی زوجیت:

حضرت آدم علیہ سلام ایک عرصہ تک تنہا زندگی بسر کرتے رہے مگر اپنی زندگی اور رحت و سکون میں ایک وحشت اور خلا محسوس کرتے تھے اور ان کی طبیعت اور فطرت کسی مونس و ہمدم کی جویا نظر آتی تھی چنانچہ اللہ تعالٰى نے حضرت حوا کو پیدا کیا۔ حضرت آدم علیہ سلام اپنا ہمدم و رفیق پا کر بے حد مسرور ہوئے اور اطمینان قلب محسوس کیا۔ حضرت آدم علیہ سلام و حضرت حوا کو اجازت تھی کہ وہ جنت میں رہیں، سہیں اور اس کی ہر چیز سے فائدہ اٹھائیں مگر ایک درخت کو معین کر کے بتایا گیا کہ اس کو نہ کھائیں بلکہ اس کے پاس تک نہ جائیں۔

حضرت آدم علیہ السلام کا بہشت سے نکلنا:

The creation of Adam

اب ابلیس کو ایک موقع ہاتھ آیا اور اس نے حضرت آدم علیہ السلام و حوا کے دل میں یہ وسوسہ ڈالا کہ یہ شجر ’’شجر خلد‘‘ ہے اس کا پھل کھانا جنت میں سرمدی آرام و سکونت اور قربِ الٰہی کا ضامن ہے اور قسمیں کھا کر ان کو باور کرایا کہ میں تمہارا خیر خواہ ہوں، دشمن نہیں ہوں۔ یہ سن کر حضرت آدم علیہ السلام کے انسانی اور بشری خواص میں سب سے پہلے نسیان (بھول چوک) نے ظہور کیا اور وہ یہ فراموش کر بیٹھے کہ اللہ تعالٰى کا یہ حکم، حکم امتناعی تھا نہ کہ مربیانہ مشورہ۔ شیطان کے ورغلانے کی وجہ سے جنت کے دائمی قیام اور قربت الٰہی کے عزم میں لغزش ہو گئی اور حضرت آدم علیہ السلام و حوا نے اس درخت کا پھل کھا لیا، اس کا کھانا تھا کہ بشری لوازم ابھرنے لگے، دیکھا تو ننگے ہیں اور لباس سے محروم۔ بلدی سے (حضرت آدم علیہ السلام و حوا) دونوں پتوں سے ستر ڈھانکنے لگے گویا انسانی تمدن کا یہ آغاز تھا کہ اس نے تن ڈھانکنے کے لیے سب سے پہلے پتوں کو استعمال کیا۔ ادھر یہ ہو رہا تھا کہ اللہ تعالٰى کا عتاب نازل ہوا اور حضرت آدم علیہ السلام سے باز پرس ہوئی کہ ممانعت کے باوجود یہ حکم عدولی کیسی؟ آدم آخر آدم تھے مقبولِ بارگاہِ الٰہی اس لیے شیطان کی طرح مناظرہ نہیں کیا اور اپنی غلطی کو تاویلات کے پردے میں چھپانے کی سعی نامشکور سے باز رہے، ندامت و شرمساری کے ساتھ اقرار کیا کہ غلطی ضرور ہوئی لیکن اس کا سبب تمردوسرکشی نہیں ہے بلکہ بربنائے بشریت بھول چوک اس کا باعث ہے، تاہم غلطی ہے، اس لیے توبہ و استغفار کرتے ہوئے عفوودرگذر کا کا خواستگار ہوں۔ اللہ پاک نے ان کے عذر کو قبول فرما لیا اور معاف کر دیا مگر وقت آ گیا تھا کہ حضرت آدم علیہ السلام اللہ کی زمین پر ’’حق خلافت‘‘ ادا کریں۔ اس لیے بہ تقاضائے حکمت ساتھ ہی فیصلہ سنایا کہ تم کو اور تمہاری اولاد کو ایک معین وقت تک زمین پر قیام کرنا ہوگا اور تمہارا دشمن ابلیس بھی اپنے تمام سامانِ عداوت کے ساتھ وہاں موجود رہے گا اور تم کو اس طرح ملکوتی اور طاغوتی دو متظاد طاقتوں کے درمیان زندگی بسر کرنا ہو گی۔ اس کے باوجود اگر تم اور تمہاری اولاد، مخلص بندے اور سچے نائب ثابت ہوئے تو تمہارا اصلی وطن ’’جنت‘‘ ہمیشہ کے لیے تمہاری ملکیت میں دیا جائے گا لہٰذا تم اور حوا دونوں یہاں سے جاؤ اور میری زمین پر جا کر بسو اور اپنی مقررہ زندگی تک حق عبودیت ادا کرتے رہو اور اس طرح انسانوں کے باپ اور اللہ تعالٰى کے خلیفہ حضرت آدم علیہ السلام نے اپنی رفیقہ حیات حوا کے ساتھ اللہ کی زمین پر قدم رکھا۔ حضرت آدم علیہ السلام ہندوستان کی سرزمین پر اور حضرت حوا جدہ کی سرزمین پر اتارے گئے اور پھر چل کر دونوں عرفات (حجاز) کے میدان میں ایک دوسرے سے جا ملے۔ اسی لیے اس میدانِ حج کا نام عرفات ہوا کیوں کہ دونوں نے اسی مقام پر ایک دوسرے کو پہچانا۔

قصہ حضرت آدم علیہ السلام میں چند اہم عبرتیں:

The creation of Adam

یوں تو حضرت آدم علیہ السلام کے واقعہ میں بے شمار پندونصائح اور مسائل کا ذخیرہ موجود ہے اور ان کا احاطہ اس مقام پر ناممکن ہے تاہم چند اہم عبرتوں کی جانب اشارہ کر دینا مناسب معلوم ہوتا ہے۔

 

1

اللہ تعالٰى کی حکمتوں کے بھید بے شمار اور ان گنت ہیں اور یہ ناممکن ہے کہ کوئی بھی ہستی خواہ وہ کتنی ہی مقربینِ بارگاہ الٰہی میں سے کیوں نہ ہو ان تمام بھیدوں پر واقف ہو جائے اسی لیے ملائکہ بھی اللہ کے انتہائی مقرب ہونے کے باوجود خلافت آدم (علیہ السلام) کی حکمت سے آشنا نہ ہو سکے اور جب تک معاملہ کی پوری حقیقت سامنے نہ آگئی وہ حیرت ہی میں غرق رہے۔

 

2

اللہ تعالٰى کی عنایت و توجہ اگر کسی حقیر شے کی جانب بھی ہو جائے تو وہ بڑے سے بڑے مرتبہ اور جلیل القدر منصب پر فائز ہو سکتی ہے اور خلعت شرف و مجد سے نوازی جا سکتی ہے۔ ایک مشت خاک کو دیکھیے اور پھر ’’خلیفتہ اللہ‘‘ کے منصب پر نظر ڈالیے اور پھر اس کے منصب نبوت و رسالت کو ملاحضہ فرمائیے مگر اس کی توجہ کا فیضان بخت و اتفاق کی بدولت یا خالی از حکمت نہیں ہوتا بلکہ اس شے کی استعداد کے مناسب بے نظیر حکمتوں اور مصلحتوں کے نظام سے منظّم ہوتا ہے۔

 

3

انسان کو اگرچہ ہمہ قسم کا شرف عطا ہوا اور ہر طرح کی جلالت و بزرگی نصیب ہوئی، تاہم اس کی خلقی اور طبعی کمزوری اپنی جگہ اسی طرح قائم رہی اور بشریت و انسانیت کا وہ نقص پھر بھی باقی رہا۔ یہی وہ چیز تھی جس نے حضرت آدم علیہ السلام پر بایں جلالت قدرومنصب عظیم نسیان طاری کر دیا اور وہ ابلیس کے وسوسہ سے متاثر ہو گئے۔

 

4

خطاکار ہونے کے باوجود اگر انسان کا دل ندامت و توبہ کی طرف مائل ہو تو اس کے لیے باب رحمت بند نہیں ہے اور اس درگا تک رسائی میں نا امیدی کی تاریک گھاٹی نہیں پڑتی البتہ خلوص اور صداقت شرط ہے اور جس طرح حضرت آدم علیہ السلام کے نسیان و لغزش کا عفواسی کے دامن سے وابستہ ہے اسی طرح حضرت آدم علیہ السلام کی تمام نسل کے لیے بھی اللہ کی رحمت و معافی کا دامن وسیع ہے۔

 

5

بارگاہ الٰہی میں گستاخی یا بغاوت بڑی سے بڑی نیکی اور بھلائی کو بھی تباہ کر دیتی ہے اور ابدی ذلت و خسران کا باعث بن جاتی ہے۔ ابلیس کا واقعہ عبرتناک واقعہ ہے اور اس کی ہزاروں سال کی عبادت گزاری کا جو حشر بارگاہ الٰہی میں گستاخی اور بغاوت کی وجہ سے ہوا وہ بلاشبہ سرمایہ صد ہزار عبرت ہے۔

You may also like these

No comments

Leave a Reply

Your email address will not be published.